Poet

Kitni Be-saakhta Khata Hun Main

Ghazal Shayari, Poet, Poetry
Kitni be-saakhta khata hun main, aap ki raghbat-o-razaa hun main. Maine jab saaz chhedna chaaha, khaamoshi cheekh uthi sadaa hun main. Hashr ki subah tak toh jaagunga, raat ka aakhiri diya hun main. Aap ne mujh ko khoob pehchaana, waaqayi sakht bewafaa hun main. Maine samjha tha main mohabbat hun, maine samjha tha mudda hun main. Kaash mujh ko koi bataaye ‘adam kis pariwash ki baddua hun main. !! – Abdul Hamid Adam

Ho Jaayegi Jab Tum Se Shanasai Zara Aur.

Poet, Poetry
Ho jaayegi jab tum se shanasaai zara aur, badh jaayegi shayad meri tanhaai zara aur. Kyon khul gaye logon pe meri zaat ke asraar, aey kaash ki hoti meri gehraai zara aur. Phir haath pe zakhmon ke nishaan gin na sakoge, ye uljhi hui dor jo suljhaai zara aur. Tardeed toh kar sakta tha phailegi magar baat, iss taur bhi hogi teri ruswaai zara aur. Kyon tark-e-taalluq bhi kiya laut bhi aaya? achchha tha ki hota jo woh harjaai zara aur. Hai deep teri yaad ka raushan abhi dil mein, ye khauf hai lekin jo hawa aayi zara aur. Ladna wahin dushman se jahan gher sako tum, jeetoge tabhi hogi jo paspaai zara aur. Badh jaayenge kuchh aur lahoo bechne waale, ho jaaye agar shehar mein mehngaai zara aur. Ek doobti dhadkan ki sadaa log na sun lein, kuchh der ko bajne do ye shehnaai zara aur. ...

Bahar Bhi Ab Andar Jaisa Sannata Hai

Ghazal Shayari, Poet, Poetry
Bahar bhi ab andar jaisa sannaata hai, dariya ke us paar bhi gehra sannaata hai. Shor thame toh shayad sadiyaan beet chuki hain, ab tak lekin sehma sehma sannaata hai. Kis se bolun ye toh ek sehra hai jahaan par, main hun ya phir goonga behra sannaata hai. Jaise ek toofaan se pehle ki khamoshi, aaj meri basti mein aisa sannaata hai. Nayi sehar ki chaap na jaane kab ubhregi, chaaron jaanib raat ka gehra sannaata hai. Soch rahe ho socho lekin bol na padna, dekh rahe ho shehar mein kitna sannaata hai. Mehv-e-khwaab hain saari dekhne wali aankhen, jaagne wala bas ek andha sannaata hai. Darna hai toh anjaani aawaaz se darna, ye toh ‘aanis’ dekha-bhaala sannaata hai. !! – Aanis Moeen Poetry Collection

Woh Kuchh Gehri Soch Mein Aise Doob Gaya Hai

Ghazal Shayari, Poet, Poetry
Woh kuchh gehri soch mein aise doob gaya hai, baithe baithe nadii kinaare doob gaya hai. Aaj ki raat na jaane kitni lambi hogi, aaj ka sooraj shaam se pehle doob gaya hai. Woh jo pyaasa lagta tha sailaab-zada tha, paani paani kehte kehte doob gaya hai. Mere apne andar ek bhanwar tha jis mein, mera sab kuchh saath hi mere doob gaya hai. Shor toh yun utha tha jaise ek toofaan ho, sanaatte mein jaane kaise doob gaya hai. Aakhiri khwaahish poori kar ke jeena kaisa, aanis’ bhi saahil tak aa ke doob gaya hai. !! – Aanis Moeen Poetry Collection

تم سے الفت کے تقاضے نہ نباہے جاتے

Poet, Poetry, Text Poetry
تم سے الفت کے تقاضے نہ نباہے جاتے ورنہ ہم کو بھی تمنا تھی کہ چاہے جاتے دل کے ماروں کا نہ کر غم کہ یہ اندوہ نصیب زخم بھی دل میں نہ ہوتا تو کراہے جاتے ہم نگاہی کی ہمیں خود بھی کہاں تھی توفیق کم نگاہی کے لیے عذر نا چاہے جاتے کاش اے ابرِ بہاری! تیرے بہکے سے قدم میری امید کے صحرا بھی گاہے جاتے ہم بھی کیوں دہر کی رفتار سے ہوتے پامال ہم بھی ہر لغزش مستی کو سراہے جاتے لذت درد سے آسودہ کہاں دل والے ہے فقط درد کی حسرت میں کراہے جاتے دی نہ مہلت ہمیں ہستی نے وفا کی ورنہ اور کچھ دن غم ہستی سے نبھائے جاتے شان الحق حقی

دیکھ لیتے ہیں اب اس بام کو آتے جاتے

Poet, Poetry, Text Poetry
دیکھ لیتے ہیں اب اس بام کو آتے جاتے یہ بھی آزار چلا جائے گا جاتے جاتے دل کے سب نقش تھے ہاتھوں کی لکیروں جیسے نقشِ پا ہوتے تو ممکن تھا مٹاتے جاتے تھی کبھی راہ جو ہمراہ گزرنے والی اب حذر ہوتا ہے اس رات سے آتے جاتے شہرِ بے مہر کبھی ہم کو بھی مہلت دیتا ایک دیا ہم بھی کسی رخ سے جلاتے جاتے پارۂ ابر گریزاں تھے کہ موسم اپنے دُور بھی رہتے مگر پاس بھی آتے جاتے ہر گھڑی اک جدا غم ہے جدائی اس کی غم کی میعاد بھی وہ لے گیا جاتے جاتے اُ س کے کوچے میں بھی ہو، راہ سے بے راہ نصیرؔ اتنے آئے تھے تو آواز لگاتے جاتے نصیر ترابی

سلسلے توڑ گیا وہ سبھی جاتے جاتے

Poet, Poetry, Text Poetry
سلسلے توڑ گیا وہ سبھی جاتے جاتے ورنہ اتنے تو مراسم تھے کہ آتے جاتے شکوۂ ظلمت شب سے تو کہیں‌بہتر تھا اپنے حصے کی کوئی شمع جلاتے جاتے کتنا آساں تھا ترے ہجر میں مرنا جاناں پھر بھی اک عمر لگی جان سے جاتے جاتے جشنِ مقتل ہی نہ برپا ہوا ورنہ ہم بھی پابجولاں ہی سہی ناچتے گاتے جاتے اس کی وہ جانے اسے پاسِ وفا تھا کہ نہ تھا تم فرازؔ اپنی طرف سے تو نبھاتے جاتے احمد فراز
دوست ہوتے ہیں

دوست ہوتے ہیں

Poet, Poetry
دوست ہوتےہیں دوستی نبھانےکےلیے آنسو ہوتےہیں یارکی خاطر بہانے کےلیے زندگی میں کچھ ایسےپیارےلوگ ملتےہیں اک مدت لگتی ہے انہیں بھلانے کے لیے کوئی پریم کہانی لکھنےسےقبل سوچ لینا کردار ضروری ہوتےہیں افسانےکےلیے زندگی میں کبھی آندھیاں کبھی طوفاں دل میں فکر رہتی ہےآشیانے کے لیے مذاق ہی مذاق میں اسےخفاکرتارہتاہوں کئی سرپھرے یار ہوتےہیں منانےکےلیے

دہشت گردی ۔۔۔۔۔۔۔

Poet, Poetry
صدی کےآغاز میں ہی خطرہ کی گھنٹی بجی تھی خوف وخطرکی علامت ہمیشہ سےسرخ رنگ ہے  مسلمان کےدہشت گرد ہونےکا کیا جاتا ہے پرچار یہ پاک وطن کو غیر مستحکم کرنےکی جنگ ہے